هفته 26 مئی 2018ء
هفته 26 مئی 2018ء

غیر اعلانیہ لوڈ شیڈنگ میں بتدریج اضافہ ، تاجران کا سخت احتجاج

راولاکوٹ، پانیولہ ، تتہ پانی ( دھرتی نیوز ) انجمن تاجران راولاکوٹ نے بجلی کی غیر اعلانیہ، جبری لوڈ شیڈنگ کے خلاف مورخہ 10مئی 2018ءتک حکومت اور متعلقہ ذمہ داران کو ڈیڈ لائن دیتے ہوئے سخت احتجاج کی دھمکی دی ہے ۔ انجمن تاجران راولاکوٹ کے صدر سردار افتخار فیروز کی زیر صدارت منعقدہ اجلاس میں تاجران نے لوڈ شیڈنگ کو تاجران کے خلاف ایک سازش قرار دیا ہے ان کا کہنا تھا کہ رمضان المبارک سے قبل جبری لوڈ شیڈنگ کا شیڈول جاری کرکے واپڈا نے آزاد کشمیر دشمنی کا ثبوت دیا ہے ۔ فی الفور اگر شیڈول واپس نہ لیا گیاتو پورے آزاد کشمیر میں سخت احتجاج کیا جائے گا اور حالات کی خرابی کی ذمہ داری حکومت اور واپڈا حکام پر عائد ہوگی ۔ تاجروں کے حقوق کا بھر پور تحفظ کیا جائے گا ۔ رمضان المبارک کے دوران تاجروں کو لو ڈشیڈنگ کے ذریعے نقصان پہنچانے کے منصوبے کو کامیاب نہیں ہونے دیں گے ۔ انہوں نے کہا کہ نعیم بٹ شہید کے سلسلہ میں بنائی گئی جوڈیشل کمیٹی کی رپورٹ فی الفور منظر عام پر لائی جائے اور ذمہ داران کے خلاف سخت کارروائی کی جائے ۔ نعیم بٹ کے ورثاءکو حکومتی وعدے کے مطابق معاوضہ اور دیگر سہولیات فوری فراہم کی جائیں بصورت دیگر سخت ایکشن لیا جائے گا ۔ انہوں نے کہا کہ 10مئی سے قبل اگر بجلی کی لوڈ شیڈنگ کا سلسلہ ختم نہ کیا گیا تو آئندہ کے لائحہ عمل کا اعلان کیا جائے اجلاس سے سردار افتخار فیروز کے علاوہ حاجی اعجاز حنیف ، طاہر فاروق ،عرفان اشتیاق ، تنویر خالق ، آصف اشرف ، قاضی کامران اور دیگر نے بھی خطاب کیا ۔ پانیولہ سے نامہ نگار کے مطابق سب ڈویثرن پانیولہ میں بجلی کی لوڈ شیڈنگ کا دورانیہ بارہ گھنٹے سے تجاوز کر گیا کاروبار معطل نظام زندگی مفلوج ہو کر رہ گیا تاجروں شہریوں اور طلبہ کا شدید احتجاج واپڈا حکومت اور محکمہ برقیات ہوش کے ناخن لیں ورنہ راست قدم اٹھانے پر مجبور ہوں گے آزادکشمیر میں پیدا ہونے والی بجلی کا دس فیصد بھی اگر یہاں دیا جائے تو لوڈ شیڈنگ ختم ہو سکتی ہے وفاقی حکومت بجلی کی پیداوار بڑھنے اور لوڈ شیڈنگ کے خاتمے کے دعوے کر رہی ہے تو دوسری طرف گرمی میں اضافہ ہوتے ہی پونچھ ڈویثرن میں بلعموم اور سب ڈویثرن پانیولہ میں بلخصوص لوڈ شیڈنگ میں بے پناہ اضافہ کر دیا گیا جسے کسی صورت قبول نہیں کیا جائے گا انہوں نے حکومت کو متنبہ کیا ہے کہ واپڈا کو سفید ہاتھی بننے سے روکا جائے اور آزادکشمیر کو لوڈ شیڈنگ سے مثتسنی قرار دلوایا جائے بصورت دیگر احتجاجی تحریک شروع کی جائے گی کیونکہ واپڈا نے جس سوتیلی مان جیسے سلوک کا آغاز کیا اس کے نتائج درست نہیں ہوں گے ہم پر امن لوگ ہیں جنہیں تشدد پر مجبور نہ کیا جائے اور لوڈ شیڈنگ فوری ختم کی جائے۔تتہ پانی سے نمائندہ کے مطابق بجلی لوڈشیڈنگ کے خاتمے کے حکومتی دعوے دھرے کے دھرے رہ گئے،گرمی میں اضافے کے ساتھ بجلی کے بحران نے سر اُٹھالیا،گھنٹوں بجلی کی غیر اعلانیہ لوڈشیڈنگ معمول بننے لگا،کاروباری نظام زندگی مفلوج ،عوا م کو سخت مشکلات کا سامنا،عوامی حلقوں کا سخت احتجاج ،بجلی لوڈ شیڈنگ فوری ختم کی جائے اور عوام کو مشکلات سے نجات دلائی جائے ، بصورت دیگرراست اقدام اُٹھانے پرمجبور ہوںگے