جمعه 16 نومبر 2018ء
جمعه 16 نومبر 2018ء

آج ہی کے دن بھارتی تسلط سے آزادی ملی تھی،جہدوجہد جاری رہے گی،کشمیری قیادت

  مظفرآباد( پی آئی ڈی )صدر آزاد جموں وکشمیر محمد مسعود خان نے کہا ہے کہ جس عظیم مقصد کے لیے بیس کیمپ کی حکومت کا قیام عمل میں لایا گیا تھا اس کے حصول تک جدوجہد پوری شد ومد سے جاری رکھی جائے گی۔آزادجموں و کشمیر کا قیام محض اتفاق نہیں تھا بلکہ اس کے لئے ریاست جموں وکشمیر کے مسلمانوں نے تاریخ ساز جدوجہد کی تھی ۔19 جولائی 1947 کو سرینگر کے مقام پر ریاستی مسلمانوں نے قرارداد پاکستان منظور کر کے اپنا مستقبل پاکستان کے ساتھ وابستہ کر نے کا فیصلہ کیا تھا ۔جب وہ یہ فیصلہ کر چکے تو انہیں اس بات کا احساس بھی ہو گیا تھا کہ تقسیم برصغیر کے اصولوں کے مطابق ریاستی مسلمانوں کو اپنے مستقبل کا فیصلہ کرنے کا موقع فراہم نہیں کیا جا رہاہے اور ایک سازش کے ذریعے ریاست جموں وکشمیر کو بھارت کا حصہ بنایا جا رہا ہے ۔چنانچہ انہوں نے ڈوگرہ راج کے خلاف اعلان جہاد آزادی کرکے قرارداد الحاق پاکستان کو عملی شکل دینے کے لیے اپنی عملی جدوجہد کا آغاز کر دیا اور پندرہ ماہ تک مسلسل بھارتی افواج کا بھرپور مقابلہ کر کے کشمیر کے ایک بڑے حصے کو ڈوگرہ فوج اور بھارتی تسلط سے آزاد کر اکے آزادجموں و کشمیر میں آج ہی کے دن ایک انقلابی حکومت قائم کر دی ۔ان خیالات کا اظہار انہوں نے آزاد حکومت ریاست جموں وکشمیر کے 71ویں یوم تاسیس کے موقع پر اپنے پیغام میں کیا ۔صدر محمد مسعود خان نے کہا کہ پاکستان کی حکومت اور عوام کشمیریوں کے لئے جو سیاسی ،اخلاقی اور سفارتی حمایت جاری رکھے ہوئے ہیں اس سے تحریک آزادی کو تقویت ملی ہے ۔بھارت نے مقبوضہ کشمیر کو عملی طورپر فوجی کالونی بنا رکھا ہے جہاں ظلم و بربریت کی نئی داستان مرتب کی جار ہی ہے ۔ انسانی حقوق کی بدترین خلاف ورزیوں ،کشمیریوں کو گاجر مولی کی طرح کاٹنے کے عمل کو تیز کرنے نے کشمیر ی عوام کو اس بات پر مجبور کیا کہ وہ میدان عمل میں کود پڑیں ۔ وزیر اعظم آزاد جموں وکشمیر راجہ محمد فاروق حیدر خان نے آزاد جموں وکشمیر کے71ویں یوم تاسیس کے موقع پر اپنے پیغام میں کہا ہے کہ ہم نے جدوجہد آزادی میں برسر پیکار کشمیر ی عوام کی آواز کو دنیائے عالم میں پہنچایا اور عالمی فورموں ،اسلامی ملکوں اور بین الاقوامی سطحوں پر مسئلہ کشمیر کو اس جاندار انداز میں اجاگر کیا کہ بھارتی مکر و فریب طشت از بام ہوکر رہ گیا۔بھارت کے ہٹ دھرم رویے نے کشمیری عوام کو اس بات پر مجبور کیا کہ وہ آزادی کے حصول کے لیے میدان عمل میں کود پڑیں ۔ کشمیر ی عوام نے آگ اور خون کے دریا عبور کرتے ہوئے آزادی کی جدوجہد کی تاریخ میں جن ابواب کا اضافہ کیا اس کی مثال تاریخ میں مشکل ہی سے مل سکے گی ۔ کشمیر ی عوام نے اپنی بے مثل قربانیوں سے یہ ثابت کر دیا ہے کہ وہ حق خودارادیت کے حصول تک اپنی جدوجہد جاری رکھیں گے ۔ وزیر اطلاعات مشتاق احمد منہاس نے کہا کہ24 اکتوبر 1947 صدیوں کی قربانی کے روشن سویرے کا نام ہے جسے لاکھوں کشمیریوں نے اپنے لہو سے منور کیا ہے ۔آج بھی کشمیریوں کی جدوجہد جاری ہے ،لاکھوںکشمیر ی تحریک آزادی کو اپنے لہو سے سیراب کر چکے ،بھارت نے تمام تر مظالم آزما لیے مگر وہ کشمیری عوام کے جذبہ حریت میں کمی نہ لا سکا ہے اور نہ آئندہ لاسکے گا ۔آزاد کشمیرکے71ویں یوم تاسیس کے موقع پر انہوں نے اپنے پیغام میں کہا کہ بھارت کشمیری عوام کے جذبہ حریت کو نہ تو دباسکتا ہے اور نہ اس میں کمی لاسکتا ہے ۔ہم بھارت سے ہر صورت آزادی لے کر رہیں گے اور الحاق پاکستان کی منزل حاصل کر کے اپنے شہداءکے مشن کو پائیہ تکمیل تک پہنچائیں گے ۔انہوں نے کہا کہ یوم تاسیس کے موقع پر ہم آزادی کی راہ میں اپنے خون کا نذرانہ پیش کرنےوالوں کو زبردست خراج عقیدت پیش کرتے ہیں۔