پیر 18 اکتوبر 2021ء
پیر 18 اکتوبر 2021ء

آزاد کشمیر میں تعلیمی نصاب تبدیل، مارکیٹ میں کتب کی عدم دستیابی

مظفر آباد / میرپور (دھرتی نیوز) آزاد جموں کشمیر کے شعبہ تعلیم ایلمنٹری اینڈ سیکنڈری ایجوکیشن نے ایک دفعہ پھر آزاد جموں کشمیر کے تعلیمی اداروں میں پڑھائے جانے والے تعلیمی نصاب کو تبدیل کر کے بعض نئے پبلشرز کی کتب نصاب میں شامل کر دی ہیں جن میں سے اکثریت مارکیٹ میں دستیاب ہی نہیں ہے۔ قبل ازیں آزاد جموں کشمیر انٹرمیڈیٹ اینڈ سیکنڈری ایجوکیشن بورڈ 9 ستمبر 2021 کو ایک پریس ریلیز جاری کیا تھا کہ انٹرمیڈیٹ اور ثانوی کی سطح پر تعلیمی سال 2021-22 کے نصاب میں کسی قسم کی تبدیلی نہیں ہوئی ہے  اور اس سیشن میں نصاب حسب سابق ہی ہوگا۔ اسی فیصلہ کے مطابق مختلف تعلیمی اداروں میں زیر تعلیم طلباء نے پرانے نصاب کی کتب خرید لی تھیں لیکن تقریباً 1 ماہ بعد سیکرٹریٹ ایلمنٹری اینڈ سیکنڈری ایجوکیشن کی جانب سے نیا حکم نامہ جاری کر دیا گیا جس کے مطابق سال 2021-22 کیلئے متعدد نئی درسی کتب کو نصاب میں شامل کرنے کی منظوری دی گئی ہے۔ تقریباً23 کتب جو نئے نصاب کا حصہ بنائی گئی ہیں ان کتب میں اردو (یونیورسٹی پبلشرز)، انگریزی (غلام رسول اینڈ سنز)، اسلامیا ت لازمی (لیڈنگ بکس پبلشرز)، بیالوجی (کارواں بک ہاؤس)، کیمسٹری (علی کتب خانہ)، فزکس (لیڈنگ گروپ پبلشرز)،ریاضی سائنس گروپ (آفاق پبلشرز)، تاریخ پاکستان (یونیورسٹی پبلشرز)، نفسیات (کارواں بک ہاؤس)، اکاؤنٹنگ (روشنی پبلشرز)، تجارتی ریاضی (روشنی  پبلشرز)، تاریخ اسلام (آفاق پبلشرز)، عربی (آفاق پبلشرز)، اسلامیات اختیاری (لیڈنگ بک پبلشرز)، کمپیوٹر (کری ایٹو پرنٹر اینڈ پبلشرز)، شہریت (لیڈنگ بکس پبلشرز)، معاشیات (کری ایٹو پرنٹر اینڈ پبلشرز)، اصول معاشیات (روشنائی پبلشرز)، اصول تجارت (روشنائی پبلشرز)، شماریات (کری ایٹو پرنٹر اینڈ پبلشرز)، جغرافیہ (آفاق پبلشرز)، لائبریری سائنس (روشنائی پبلشرز) شامل ہیں۔ محکمہ تعلیم کے اس فیصلہ سے جہاں بکس سیلرز پر کتب کی عدم دستییابی کے باعث پریشان ہیں وہاں والدین بھی سخت ذہنی اذیت کا شکار ہیں کیونکہ انہیں ایک ہی سیشن میں دو مرتبہ کتب خریدنی پڑیں گی۔   

آج کااخبار

سب سے زیادہ پڑھی جانے والی خبریں

کالم