پیر 23 جولائی 2018ء
پیر 23 جولائی 2018ء

یونین کونسلز کے انتظامی امور کی منتقلی کے خلاف ایکشن کمیٹی ہجیرہ کا احتجاجی مارچ

ہجیرہ (دھرتی نیوز )ضلع پونچھ کے حلقہ 1 عباسپور کی ایل او سی کے نزدیک واقع سات یونین کونسلز کے بعض انتظامی امور ہجیرہ کی بجائے عباسپور منتقل کیے جانے کے حکومتی نوٹیفکیشن کی منسوخی کے لیے دباﺅ ڈالنے کے لیے ایکشن کمیٹی ہجیرہ کے زیراہتمام کراسنگ پوائنٹ تیتری نوٹ کی جانب ایک احتجاجی مارچ کیا گیا۔اس دوران ہجیرہ میں کچھ دیر کے لیے شٹر ڈاﺅن رہا اور گاڑیوں کی آمد و رفت بھی جزوی طور پر معطل رہی ۔ مظاہرین کو ایل او سی کی جانب جانے سے روکنے کے لیے ضلعی انتظامیہ اور پولیس نے مل کر حکمت عملی طے کر رکھی تھی ۔مظاہرین جب دوارندی پہنچے تو ایڈیشنل ڈپٹی کمشنر سردار طارق خان اور ایس پی پونچھ یٰسین بیگ نے ایکشن کمیٹی کے نمائدگان سے مذاکرات کی کوشش کی لیکن شرکاءمارچ بضد تھے کہ وہ تیتری نوٹ تک مارچ کریں گے ۔اسی دوران بعض مظاہرین نے پولیس کا ناکہ توڑ کر آگے جانے کی کوشش کی تو پولیس نے مظاہرین کو روکنے کے لیے آنسوگیس کے شیل کااستعمال کیا اور لاٹھی چارج بھی کیا جس کے جواب میں مظاہرین نے پتھراﺅ کیا۔ایک پولیس اہلکار اور نصف درجن کے قریب مظاہرین زخمی ہوئے۔ جنہیں طبی امداد پہنچائی گئی ۔ شرکاءمارچ میں سابق سپیکر اسمبلی سردار محمد صادق خان ،سابق امیدوار اسمبلی کاشان مسعود،واجد علی ایڈوکیٹ اور دیگر شامل تھے۔مظاہرین نے پولیس کی ایک گاڑی کے شیشے توڑ ڈالے جبکہ پولیس کی شیلنگ سے ایمبولینس کا شیشہ ٹوٹ گیا۔مظاہرین حکومت کے خلاف اور مسائل کے حق میں شدید نعرہ بازی کرتے رہے۔پولیس اور مظاہرین کے درمیان جھڑپ تقریباً ایک گھنٹہ تک جاری رہی۔مظاہرین نے دواراندی کے مقام پر دھرنا دے کر احتجاجی جلسہ شروع کیا۔احتجاجی جلسہ سے سابق سپیکر سردار غلام صادق خان، سردار اعجاز ایڈووکیٹ، کاشان مسعود، سردار الطاف، رئیس انقلابی ایڈووکیٹ، نسیم انجم ایڈووکیٹ، سردار محمد نسیم، سردار انصار احمد، نبیل امتیاز، مختار علی خان، حافظ ساجد، جاوید چوہدری ایڈووکیٹ،سردار امین ایڈووکیٹ، محمود سدوزئی ، عرفا ن عظیم زرگر، ناصر مشتاق، مجید بسمل، ثاقب خورشید، شبیر انقلابی و دیگر نے خطاب کرتے ہوئے مظاہرین پر پولیس تشدد کی شدید مذمت کی اور کہاکہ حلقہ1کی سات یونین کونسلز کو عباسپور کے ساتھ منسلک کر کے ایم ایل اے حلقہ عباسپور اور موجودہ حکومت نے انڈین فائرنگ کے متاثرین کو مزید عذاب میں مبتلا کردیا۔عوام کو سہولیات دینے کی بجائے موجودہ حکومت مسائل میں الجھا رہی ہے۔نوٹیفکیشن منسوخ نہ کرنا حکومت کا احمقانہ اقدام ہے۔ایک طرف بھارتی فوج ان یونین کونسلز کے عوام پر دن رات فائرنگ اور گولہ باری کرتی ہے تو دوسری طرف حکومت آزادکشمیر نے ان عوام کو مسائل کی دلدل میں پھنسا دیا ہے۔مقررین نے کہا کہ کراسنگ پوائنٹ جانے سے ہمیںکوئی نہیں روک سکتا لیکن آئندہ کا لائحہ عمل آج کے اجلاس میں طے کر کے اعلان کریں گے۔مظاہرین کے نمائندہ وفد اورسابق سپیکر اسمبلی سردار غلام صادق خان نے ضلعی انتظامیہ ایڈیشنل کمشنر سردار طارق وایس ایس پی یاسین بیگ سے مذاکرات کے بعد احتجاج کو مو¿خر کرنے کا اعلان کرتے ہوئے کہاکہ آج ایک بڑے اجلاس میں آئند ہ کے لائحہ عمل کا اعلان کیاجائے گا۔  

آج کااخبار

سب سے زیادہ پڑھی جانے والی خبریں

کالم