منگل 25 جنوری 2022ء
منگل 25 جنوری 2022ء

،کھٹارہ،پبلک ٹرانسپورٹ کی بھرمار،انسانی زندگیوں کو خطرات

راولاکوٹ (انویسٹی گیشن سیل) راولاکوٹ میں پبلک سروس کھٹارہ وبغیر نمبر پلیٹس گاڑیوں کی بھرمار سے انسانی زندگیوں کو شدید خطرات لاحق ہو گئے ہیں۔ شہر سے مختلف روٹس پر چلنے والی پبلک ٹرانسپورٹ اس قدر ناکارہ ہو چکی ہے کہ اس میں سفر کرنے والوں کی زندگیاں ہر وقت خطرہ سے دوچار ہیں۔ ایک سروے کے دوران معلوم ہوا ہے کہ شہر میں کئی ایسے پبلک ٹرانسپورٹ کے اڈہ جات پائے جاتے ہیں جہاں سے اندرون و بیرون ضلع چلائی جانے والی پبلک ٹرانسپورٹ کی حالت انتہائی نامناسب اور بغیر کسی فٹنس سرٹیفکیٹ کے ہی انسانی جانوں سے کھیلنے کا دھندہ عروج پر ہے۔ دوران سروے معلوم ہوا ہے کہ ان اڈہ جات پر کئی گاڑیاں ایسی بھی موجود ہیں جو آدھے راستے میں ہی کسی فنی خرابی کا شکار ہو جاتی ہیں جن کے باعث مسافروں کو شدید مشکلات کا سامنا کرنا پڑتا ہے۔ علاوہ ازیں ان کھٹارہ گاڑیوں میں اکثریت ایسی بھی ہے جس کی نہ ہی کوئی نمبر پلیٹس ہوتی ہیں اور نہ ہی ان گاڑیوں کی حالت اتنی موزوں ہوتی ہے کہ اس میں کوئی سفر کر سکے۔ بغیر نمبر پلیٹس گاڑیاں جب بھی کسی حادثہ کا شکار ہوتی ہیں تو اس وقت بھی نشاندہی میں شدید مشکلات کا سامنا کرنا پڑتا ہے۔ راولاکوٹ و گردونواح کے دشوار گزار راستے، سڑکوں کی ناگفتہ بہ حالت اور پھر ایسی کھٹارہ، بغیر نمبر پلیٹس و فٹنس سرٹیفکیٹ چلنے والی گاڑیوں متعلقہ حکام کیلئے بھی ایک بڑا چیلنج بن چکی ہیں اور مسافروں کو بھی ان گاڑیوں پر آئے روز کئی طرح کی مشکلات اور مسائل کا سامنا کرنا پڑھتا ہے۔ ضلعی انتظامیہ کا ایسی تمام گاڑیوں کے خلاف آپریشن انتہائی ناگزیر ہو چکا ہے جو ہر لمحہ انسانی زندگیوں کو موت کے منہ میں دھکیلنے کے مترادف ہیں۔ گزشتہ ماہ کمشنر پونچھ ڈویژن و چیئر مین ریجنل ٹرانسپورٹ اتھارٹی کی جانب سے روٹ پرمٹ اور فٹنس سرٹیفکیٹ کے بغیر چلنے والی پبلک ٹرانسپورٹ کے خلاف ہنگامی بنیادوں پر کاروائی عمل میں لائے جانے کا فیصلہ کیا گیا تھا اور ہدایات جاری کی گئی تھیں کہ تمام نان کسٹم اور بغیر روٹ پرمٹ حادثات کا شکار ہونے والی گاڑی میں ہونے والے جانی نقصان کی مکمل انکوئرای کرتے ہوئے ذمہ دا کا تعین کیا جائے گا اور متعلقہ افراد اور اداروں کے خلاف فوجداری کی کاروائی تحریک کی جائے گی مگر تاحال اس حوالہ سے متعلقہ ذمہ داران کی جانب سے کسی قسم کے نہ ہی کوئی اقدامات اٹھائے گئے اور نہ ہی روٹ پرمٹ، فٹنس سرٹیفکیٹ کے بغیر چلنے والی ٹرانسپورٹ کے خلاف کسی قسم کی کوئی کاروائی عمل میں لائی گئی جو باعث تشویش ہے۔  

آج کااخبار

سب سے زیادہ پڑھی جانے والی خبریں

کالم