بدھ 15  اگست 2018ء
بدھ 15  اگست 2018ء

پرویز مشرف کا شناختی کارڈ اور پاسپورٹ بلاک کرنے کا حکم

  اسلام آباد (دھرتی نیوز)حکمراں جماعت پاکستان مسلم لیگ نواز نے اپنی حکومت کے آخری دن سابق فوجی صدر جنرل (ر) پرویز مشرف کا شناختی کارڈ اور پاسپورٹ بلاک کرنے کا حکم جاری کیا ہے۔وزارت داخلہ کے ایک اہلکار نے بی بی سی کو بتایا کہ حکومت کی طرف سے یہ اقدام سابق فوجی صدر کے خلاف آئین شکنی کے مقدمے کی سماعت کرنے والی خصوصی عدالت کے حکم پر کیا گیا ہے۔جسٹس یحیٰ آفریدی کی سربراہی میں تین رکنی خصوصی عدالت نے حکومت کو انٹرپول کے ذریعے ملزم پرویز مشرف کو وطن واپس لانے کے احکامات جاری کیے تھے۔ان احکامات میں ملزم کا شناختی کارڈ اور پاسپورٹ بلاک کرنے کا بھی ذکر کیا گیا تھا۔خصوصی عدالت کی طرف سے یہ حکم جاری ہونے کے بعد بینچ کے سربراہ جسٹس یحی آفریدی نے اس خصوصی بینچ کی سربراہی کرنے سے معذوری ظاہر کی تھی جس کے بعد یہ بینچ ٹوٹ گیا تھا۔ملزم پرویز مشرف کے خلاف اس کے بعد سے اب تک آئین شکنی کے مقدمے کی سماعت نہیں ہوئی جبکہ ان پر فرد جرم بھی عائد ہو چکی ہے۔سابق فوجی صدر پرویز مشرف ان دنوں دوبئی میں مقیم ہیں اور وزارت داخلہ کے اہلکار کے مطابق شناختی کارڈ اور پاسپورٹ بلاک ہونے کی صورت میں ملزم نہ تو کسی دوسرے ملک سفر کرسکیں گے اور نہ ہی پاکستان یا بیرون ممالک کوئی جائیداد خرید سکیں گے۔وزارت داخلہ کے اہلکار کے مطابق پاسپورٹ اور شناختی کارڈ بلاک ہونے سے ملزم پرویز مشرف کو کسی قسم کی بینک ٹرانزیکشن کرنے کی بھی اجازت نہیں ہو گی۔سابق فوجی صدر پرویز مشرف بیماری کو بنیاد بنا کر موجودہ حکومت کے دور میں ہی بیرون ملک روانہ ہو گئے تھے۔نادرا کے حکام کا کہنا ہے کہ ا±نھیں ابھی تک وزارت داخلہ سے تحریری طور پر احکامات نہیں ملے تاہم ا±نھیں متعقلہ وزارت کے اعلی حکام کی طرف سے زبانی طور پر اس بارے میں آگاہ کردیا گیا ہے۔2013 کے انتخابات میں کامیابی کے بعد پاکستان مسلم لیگ نواز نے حکومت میں آنے کے بعد سابق فوجی صدر پرویز مشرف کے خلاف آئین شکنی کا مقدمہ درج کیا تھا۔سابق وزیر اعظم میاں نواز شریف نے احتساب عدالت میں بیان دیتے ہوئے کہا تھا کہ ا±ن کےخلاف ریفرنس فوجی آمر جنرل ریٹائرڈ پرویز مشرف کے خلاف آئین شکنی کا مقدمہ درج کرنے کی وجہ سے بنائے گئے ہیں۔پرویز مشرف نے سنہ1999 میں پاکستان مسلم لیگ نواز کی حکومت کو ختم کر کے اقتدار پر قبضہ کر لیا تھا۔  

آج کااخبار

سب سے زیادہ پڑھی جانے والی خبریں

کالم