هفته 18  اگست 2018ء
هفته 18  اگست 2018ء

ن لیگ اور پیپلز پارٹی کا حلف اٹھانے پراتفاق

اسلام آباد(صباح نیوز)پاکستان میں ایک سے زائد مرتبہ اقتدار میں رہنے والی دونوں بڑی جماعتیں پاکستان مسلم لیگ (ن) اور پاکستان پیپلزپارٹی قومی اور صوبائی اسمبلیوں میں حلف اٹھانے پرمتفق ہوگئی ہیں۔پارلیمنٹ میں اپوزیشن کا مضبوط اور متحرک کردار ادا کیا جائے گا اور انتخابات میںدھاندلی میں ملوث قوتوںکو بے نقاب کیا جائے گا۔الیکشن کمیشن قبل از اور بعدازاں دھاندلی کو روکنے میں ناکام رہا۔ دونوں جماعتوں نے چیف الیکشن کمشنر اور کمیشن کے اراکین سے فی الفور مستعفیٰ ہونے کا مطالبہ بھی کردیا ۔ مرکزاور صوبوں میں تعاون پر اتفاق ہوگیا ہے ۔ ملک میں کوئی بھی آئینی بحران پیدا نہیں ہونے دیا جائے گاتاکہ کسی طالع آزما کو جمہوریت کا بوریابستر گول کرنے کا موقع نہ مل سکے ۔ ان خیالات کا اظہار پاکستان پیپلزپارٹی وفد کے سربراہ فرحت اللہ بابر نے سپیکر قومی اسمبلی سردار ایاز صادق سے ملاقات کے بعد میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کیا ۔ ان کی قیادت میں سابق وزیراعظم سید یوسف رضاگیلانی ، سابق اپوزیشن لیڈر سید خورشید شاہ ،سید نوید قمر،قمر زمان کائرہ اور دیگر نے سردار ایاز صادق سے منسٹر کالونی میں اسپیکر ہاﺅس میں ملاقات کی جو ایک گھنٹے تک جاری رہی ۔ ذرائع نے دعویٰ کیاہے کہ دونوں جماعتیں قومی وصوبائی اسمبلیوں میں حلف اٹھانے پر متفق ہوگئیں ہیں، متحدہ حزب اختلاف دھاندلی کے ایشو کوشدت کے ساتھ پارلیمنٹ میں اٹھائے گی اور وفد کے سربراہ نے آگاہ کردیا ہے کہ مسلم لیگ ن نے مثبت جواب دیا ہے، اب متحدہ مجلس عمل کی قیادت سے ملاقات کے بعد پیپلزپارٹی مسلم لیگ ن متحدہ مجلس عمل کا مشترکہ مشاورتی اجلاس متوقع ہے مشترکہ لائحہ عمل کا اعلان کیا جاسکے گا۔ سپیکر قومی اسمبلی اپوزیشن جماعتوں میں پل بن گئے ۔ میڈیا سے بات چیت کرتے ہوئے فرحت اللہ بابر نے کہا کہ دونوں جماعتیں اس بات پر متفق ہیں کہ 2018کے انتخابات میں دھاندلی ہوئی ہے۔ دونوں جماعتوں نے متفقہ طور پر قرار دیا ہے کہ الیکشن کمیشن آف پاکستان اپنی ذمہ داری ادا کرنے میں ناکام رہا ۔ قبل از اور بعدازاں دھاندلی کو مسترد کرتے ہیں جسے روکنے میں الیکشن کمیشن ناکام رہا متفقہ طور پر دونوں جماعتوں نے مطالبہ کیا ہے کہ الیکشن کمیشن آف پاکستان مستعفیٰ ہوجائے سردار ایاز صادق اب اپنی پارٹی کی قیادت سے بات کریں گے ۔ رابطے جاری رہیں گے اور اس بات پر بھی اتفاق ہوا ہے کہ مرکز میں مضبوط حزب اختلاف کا کردار پوری فعالیت سے ادا کریں گے ۔ پارلیمنٹ میں ان کو قوتوں کو بے نقاب کریں گے جنہوںنے انتخابات کو چرایا ہے ۔ پارلیمنٹ میں متحد رہیں گے اس کا مقصد یہ ہے کہ جو قوتیں پارلیمنٹ کو عضو معطل بنانا چاہتی ہیں ایسا نہ ہواور کسی کو جمہوریت کا بوریا بستر گول کرنے کا موقع ملے ۔ مسلم لیگ ن نے مثبت جواب دیا ہے اور اس بات پر اتفاق کیا ہے کہ پارلیمنٹ ہی بہترین فورم ہے جس کا بھر پور استعمال کرتے ہوئے دھاندلی میں ملوث تمام  قوتوں کو بے نقاب کیا جائے متحدہ مجلس عمل کی قیادت کو بھی اپنے موقف سے آگاہ کررہے ہیں ۔   

آج کااخبار

سب سے زیادہ پڑھی جانے والی خبریں

کالم