جمعرات 13 دسمبر 2018ء
جمعرات 13 دسمبر 2018ء

اہم خبریں

حلقہ ایل اے 19پونچھ 3راولاکوٹ ، 1985سے 2016ء تک کا سیاسی سفر

راولاکوٹ ( دھرتی نیوز) راولاکوٹ جسے آزادکشمیر کا دل کہا جاتا ہے میں جموں کشمیر پیپلزپارٹی کے سربراہ سردار خالد ابراہیم مرحوم کی وفات کے بعد خالی نشست پر تیس دسمبر کو ضمنی انتخاب ہو گا ، حلقہ ایل اے 19پونچھ 3راولاکوٹ نہ صرف انتخابات میں آزادکشمیر بھر کے لوگوں کی توجہ کا مرکز رہتا ہے بلکہ عام حالات میں بھی راولاکوٹ کو خصوصی اہمیت حاصل رہتی ہے ، اس حلقہ سے تاریخ ساز شخصیات نے انتخابات میں حصہ لیا اور یہی وجہ ہے کہ لوگوں کی توجہ اس طرف مبذول رہتی ہے ،تحریک آزادی کشمیر کے ہیرو ، بانی صدر آزادکشمیر غازی ملت سردار محمد ابراہیم خان ، سابق صدر جنرل ریٹائرڈ محمد حیات خان ،سابق صدر و وزیر اعظم سرداریعقوب خان ، جماعت اسلامی آزادکشمیر کے سابق امیر سردار اعجاز افضل خان ، سابق وزراء حکومت سردار طاہر انور ایڈووکیٹ، سردار عابد حسین عابد ، فرزانہ یعقوب ، خان اشرف خان مرحوم کا تعلق اسی حلقہ سے ہے ، سردار طاہر انور ایڈووکیٹ اور سردار عابد حسین عابد کو مخصوص نشستوں پر ممبر اسمبلی بنایا گیا اور دونوں وزارت کے عہدہ پر بھی فائز ہوئے ، اس حلقہ سے مختلف جماعتیں اور شخصیات انتخابات میں حصہ لیتی رہی ہیں اور ریٹائرڈ جنرل محمد حیات خان اور سردار یعقوب خان کو سب سے زیادہ تین مرتبہ ممبر اسمبلی منتخب ہونے کا اعزاز حاصل ہے ،اس حلقہ کی انتخابی تاریخ بھی بہت دلچسپ رہی ہے ، آزادکشمیر میں پارلیمانی نظام 1985سے مسلسل رواں دواں ہے ،آزادکشمیر میں15مئی 1985ء کے انتخابات میں اس حلقہ سے سابق صدر ریٹائرڈ میجرجنرل محمد حیات خان ( تحریک عمل ) ، ماسٹر سید اکبر ( مسلم کانفرنس ) ، سردار محمد اسحاق خان ( آزادمسلم کانفرنس ) ، بریگیڈیئر ریٹائرڈ محمد اشرف خان نے حصہ لیا ان انتخابات میں سردار محمد حیات خان نے کامیابی حاصل کی جبکہ ماسٹر سید اکبر دوسرے نمبر پر رہے واضح رہے کہ اس وقت موجودہ پونچھ ڈویژن ایک ہی ضلع تھا اور راولاکوٹ حلقہ نمبر سات تھا، ان انتخابات میں مسلم کانفرنس نے کامیابی حاصل کی اور سردار سکند ر حیات خان اس وقت وزیر اعظم کے عہدہ پر فائز ہوئے۔ 21مئی 1990کے انتخابات میں ریٹائرڈ میجر جنرل سردار محمد حیات خان (تحریک عمل ) ،غازی ملت سردار محمد ابراہیم خان ( پاکستان پیپلزپارٹی ) ، سردار محمد عارف خان ( مسلم کانفرنس ) ،سردار جاوید نثار ( قوم پرست تنظیم ) نے حصہ لیا جس میں سردار محمد حیات خان نے 346ووٹ سے کامیابی حاصل کی ، دوسرے نمبر غازی ملت سردار محمد ابراہیم خان رہے، اس مرتبہ پاکستان پیپلزپارٹی نے حکومت بنائی اور راجہ ممتاز حسین راٹھور کو وزیر اعظم بنایا گیا تھا اور یہ اسمبلی ایک سال کا عرصہ بھی پورا نہ کر سکی اور راجہ ممتاز راٹھور نے اسمبلی توڑ دی ، اس کے بعد 29جون 1991ء کو عام انتخابات ہوئے ، جس میں راولاکوٹ کے حلقہ سے الیکشن میں حصہ لینے والوں میں سابق صدر ریٹائرڈ میجر جنرل محمد حیات خان ( تحریک عمل ) ، خان اشرف خان ( پاکستان پیپلزپارٹی ) سردار عارف خان ( مسلم کانفرنس ) قابل ذکر ہیں ، اس وقت جموں کشمیر پیپلزپارٹی کا قیام عمل میں لایا جا چکا تھا اور جے کے پی پی اور تحریک عمل کا انتخابی اتحاد ہواتھا اوردونوں جماعتوں کے مشترکہ امیدوار سردار محمد حیات خان تھے اور انہوں نے کامیابی حاصل کی اور خان اشرف خان ایک ہزار سے کم کے مارجن سے دوسرے نمبر پر رہے ان انتخابات میں مسلم کانفرنس نے ایک مرتبہ پھر کامیابی حاصل کی اور سردار محمد عبدالقیوم خان وزیر اعظم آزادکشمیر منتخب ہوئے ، 30جون 1996ء کو ہونیوالے عام انتخابات میں جن قابل ذکر امیدواران نے حصہ لیا ان میں غازی ملت سردار محمد ابراہیم خان ( جے کے پی پی ) ، جنرل ریٹائرڈ محمد حیات خان ( مسلم لیگ چٹھہ گروپ ) ، سردار محمد یعقوب خان ( مسلم کانفرنس ) ، سردار اعجاز افضل ایڈووکیٹ ( جماعت اسلامی ) شامل ہیں ، ان انتخابات میں غازی ملت سردار محمد ابراہیم خان نے کامیابی حاصل کی اور سردار یعقوب خان دوسرے نمبر پر رہے جبکہ جنرل حیات تیسرے نمبر پر رہے ، ان انتخابات میں پاکستان پیپلزپارٹی نے حلقہ تین راولاکوٹ میں مسلم لیگ چٹھہ گروپ اور حلقہ چار میں جے کے پی پی سے اتحاد کر رکھا تھا ، ان انتخابات میں پاکستان پیپلزپارٹی نے کامیابی حاصل کی اور بیرسٹر سلطان محمود چوہدری وزیر اعظم منتخب ہوئے جبکہ غازی ملت سردار محمد ابراہیم خان کو صدر ریاست بنایا گیا ، غازی ملت سردار محمد ابراہیم خان کے صدر ریاست منتخب ہونے کے بعد حلقہ تین راولاکوٹ میں 20اکتوبر 1996کو ضمنی انتخاب ہوا جس میں خان اشرف خان ( پاکستان پیپلزپارٹی ) ، سردار محمد یعقوب خان ( مسلم کانفرنس ) ، سردار اعجاز افضل خان ( جماعت اسلامی ) و دیگر نے حصہ لیا ، ان انتخابات میں حلقہ تین راولاکوٹ سے مسلم کانفرنس اور مسلم لیگ چٹھہ گروپ کا انتخابی اتحاد تھا ، پاکستان پیپلزپارٹی اور جے کے پی پی کے مشترکہ امیدوار خان اشرف خان نے کامیابی حاصل کی جبکہ سردار یعقوب خان دوسرے نمبر پر رہے، خان اشرف خان وزیر مال کے عہدہ پر فائز رہے ، 5جولائی 2001ء کو ہونیوالے انتخابات میں اس حلقہ سے سردار یعقوب خان ( مسلم کانفرنس ) ، سردار خالد ابراہیم خان ( جے کے پی پی ) ، سردار اعجاز افضل خان ( جماعت اسلامی )،سردار عابد خان( پاکستان پیپلزپارٹی) و دیگر نے حصہ لیا ، ان انتخابات میں مسلم کانفرنس کے امیدوار حاجی یعقوب خان نے کامیابی حاصل اور مسلم کانفرنس کی حکومت قائم ہونے کے بعد سردار سکندر حیات خان وزیر اعظم آزادکشمیر منتخب ہوئے،اس دورانیہ میں سردار یعقوب خان وزارت صحت کے عہدہ پر متمکن رہے ، 11جولائی 2006ء کو ہونیوالے انتخابات میں راولاکوٹ کے حلقہ سے سردار یعقوب خان(حقیقی مسلم کانفرنس ) ، سردار خالد ابراہیم خان ( جے کے پی پی ) ، سردار طاہر انور ( مسلم کانفرنس ) ، اعجاز افضل ایڈووکیٹ ( جماعت اسلامی ) ، خان اشرف خان ( پاکستان پیپلزپارٹی ) سردار عابد خان ( پیپلزمسلم لیگ ) سمیت دیگر امیدواران نے حصہ لیا ، ان انتخابات میں سردار یعقوب خان نے ایک ہزار ووٹ سے سردار خالد ابراہیم سے الیکشن جیتا ، ایک مرتبہ پھر مسلم کانفرنس برسراقتدار آئی اور سردار عتیق احمد خان وزیرا عظم منتخب ہوئے ، اس اسمبلی نے ریکارڈ ساز ان ہاؤس تبدیلی عمل میں لائی ، پہلے سردار عتیق احمد کے خلاف عدم اعتماد ہوا جس میں سردار یعقوب خان کو وزیر اعظم بنایا گیا اور سردار خالد ابراہیم خان نے حلقہ چار سے جیتی ہوئی نشست سے استعفیٰ دیدیا ، جبکہ سردار یعقوب کیخلاف عدم اعتماد کے بعد راجہ فاروق حیدر وزیر اعظم بن گئے ، پھر فاروق حیدر کے خلاف عدم اعتماد کی تحریک لائی گئی اور سردار عتیق احمد کو پھر وزیر اعظم بنایا گیا ، واضح رہے کہ 2006ء کے الیکشن میں سردار یعقوب خان کو مسلم کانفرنس کی طرف سے ٹکٹ نہیں ملا تھا اور انہوں نے حقیقی مسلم کانفرنس کے نام سے قائم گروپ کے نام سے الیکشن میں حصہ لیا تھا اور بعد ازاں انہوں نے پاکستان پیپلزپارٹی میں شمولیت اختیار کر لی تھی ، 26جون 2011ء کو ہونیوالے عام انتخابات میں راولاکوٹ کے حلقہ سے سردار یعقوب خان ( پاکستان پیپلزپارٹی ) ، سردار خالد ابراہیم خان ( جے کے پی پی ) ، اعجاز افضل خان ( جماعت اسلامی ) ، سردار نذیر خان ( مسلم کانفرنس ) ، سردار لیاقت حیات (نیپ ) نے حصہ لیا ،جس میں پی پی پی کے سردار یعقوب نے کامیابی حاصل کی ، سردار یعقوب خان نے 27655، خالد ابراہیم نے 17354، اعجاز افضل نے 4946، سردار نذیر نے 1863ووٹ حاصل کئے ، انتخابات کے بعدچوہدری عبدالمجید کو وزیر اعظم منتخب کیا گیا جبکہ سردار یعقوب خان کو صدر آزادکشمیر کے عہدہ پر فائز ہوئے اورخالی ہونیوالی نشست پر 23اکتوبرکو ضمنی انتخاب ہوا جس میں فرزانہ احمد ( پاکستان پیپلزپارٹی ) ، اعجاز افضل ( جماعت اسلامی ) ، سردار عابد خان ( مسلم لیگ ن ) ، سردار نیئر ایوب ( آزاد ) ودیگر نے حصہ لیا ، جموں کشمیر پیپلزپارٹی نے ضمنی انتخاب میں حصہ نہیں لیا تھا اور مسلم لیگ ن کے امیدوار کی حمایت کی تھی ،2011کے ضمنی الیکشن میں فرزانہ احمد نے کامیابی حاصل کی اور وہ وزارت سماجی بہبود بھی رہیں ،انہوں نے 20005ووٹ سردا راعجاز افضل خان نے6250، پاکستان مسلم لیگ ن کے سردار عابد حسین خان نے4722، آزاد امیدوار سردار نیئر ایوب خان نے 3381ووٹ حاصل کئے ،21جولائی 2016کو ہونیوالے انتخاب میں حلقہ ایل اے انیس پونچھ تین راولاکوٹ سے سردار خالد ابراہیم خان ( جے کے پی پی ) ، فرزانہ احمد ( پاکستان پیپلزپارٹی ) ، سردار اعجاز افضل خان ( جماعت اسلامی ) ،سردار نیئر ایوب ( پی ٹی آئی)، لیاقت حیات ( نیپ) نے حصہ لیا ، ان انتخابات میں جموں کشمیر پیپلزپارٹی کے صدر سردار خالد ابراہیم نے کامیابی حاصل کی ، انہوں نے 25299، فرزانہ احمدنے 16116،، اعجاز افضل نے 4849، نیئر ایوب نے 3944، لیاقت حیات نے 2406ووٹ حاصل کئے ، 2016کے انتخابات میں مسلم لیگ ن آزادکشمیر نے کامیابی حاصل کی اور راجہ فاروق حیدر خان وزیر اعظم ، جبکہ سردار مسعود خان صدر آزادکشمیر کے عہدہ پر فائز ہوئے ، جموں کشمیر پیپلزپارٹی کے صدر سردا رخالد ابراہیم خان کی وفات کے بعد خالی ہونیوالی نشست پر 30دسمبر کو ضمنی انتخاب ہو گا جس میں سابق صدر و وزیر اعظم سردار یعقوب خان ( پی پی پی ) ، سردار حسن ابراہیم ( جے کے پی پی ) ، سردار طاہر انور ( مسلم لیگ ن ) ، سردار لیاقت حیات ( نیپ ) ، راجہ اجمل افسر ( آزاد ) ، نوید اصغر ( راہ حق پارٹی ) حصہ لے رہے ہیں ،امیدواران بھرپور انتخابی مہم چلا رہے ہیں اور تیس دسمبر کو یہ فیصلہ ہو گا کہ کون فتح یاب ہو گا ۔ 

پاکستان

کمرشل بینکوں نے ایس ایم ایس سروس مفت کرنے کا اعلان کردیا،

لاہور (مانیٹرنگ ڈیسک) کمرشل بینکوں نے صارفین کیلئے ایس ایم ایس سروس مفت کرنے کا اعلان کردیا، جنوری 2019 سے تمام بینک اپنے صارفین سے ایس ایم ایس سروس چارجز وصول نہیں کریں گے۔ تفصیلات کے مطابق کمرشل بینکوں نے صارفین کیلئے جنوری 2019 سے ایس ایم ایس سروس مفت کرنے کا اعلان کردیا ہے۔ ملک میں اس وقت بیشتربینک آن لائن رقم کی ادائیگی اور اے ٹی ایم سے نکالی جانے والی رقوم کے نتیجے میں موصول ہونے والے ایس ایم ایس پر ماہانہ کی بنیاد پر کئی سو روپے وصول کرتے ہیں۔ ایس ایم ایس کی سہولت صارفین کیلئے ایک بہت ہی فائدہ مند سہولت ہے۔ کسی دوسرے شخص کی جانب سے بینک اکاونٹ تک رسائی کی صورت میں بینک فوری طور پر اصل صارف کو ایس ایم ایس الرٹ بھیج دیتا ہے۔ تاہم ایس ایم ایس سروس چارجز کے باعث صارفین سیکورٹی سہولت سے فائدہ نہیں اٹھاتے۔ بیشتر صارفین ایس ایم ایس کی مد میں محض چند سو روپے کی فیس بھی ادا نہیں کرنا چاہتے۔ اسی لی

انٹرنیشنل

کینیڈا نے اسلام آباد کو اپنے شہریوں کے سفر کیلئے محفوظ قرار دےدیا

اسلام آباد(اے این این ) کینیڈا نے پاکستان کے دارالحکومت اسلام آباد کو اپنے شہریوں کے سفر کے لیے 'محفوظ' شہر قرار دے دیا۔کینیڈا نے پاکستان کیلئے اپنی 'سفری ہدایات' میں تبدیلی کرتے ہوئے اسلام آباد کو ان شہروں کی فہرست خارج کر دیا ہے، جن کے بارے میں شہریوں کو غیر ضروری سفر سے اجتناب کرنے کا مشورہ دیا جاتا ہے۔کینیڈا کے مشاہدے میں یہ بات سامنے آئی کہ کینیڈین شہریوں کے لیے اسلام آباد کے سفر میں خطرات میں کمی آئی ہے، جس کے بعد شعبہ عالمی امور( گلوبل افیئرز ڈپارٹمنٹ)کی جانب سے پاکستان کے لیے سفری ہدایات میں رد و بدل کی گئی۔اس سلسلے میں کینیڈا میں تعینات پاکستانی ہائی کمشنر طارق عظیم نے کینیڈا کی حکومت کی جانب سے اسلام آباد کا نام پرخطر شہروں کی فہرست سے نکالنے پر اطمینان کا اظہار کیا اور اسے پاکستان میں سیکیورٹی صورتحال کی بہتری قرار دیا۔اوٹاوا میں موجود پاکستانی ہائی کمیشن کا کہنا تھا کہ پہلے اقدام کے تحت اسلام آباد کا نام

آج کااخبار

سب سے زیادہ پڑھی جانے والی خبریں

کالم