بدھ 16 جون 2021ء
بدھ 16 جون 2021ء

ڈی ایچ او پونچھ ڈاکٹر محمد حیات گرفتار،ملازمین تنظیموں کی ہیلتھ سروسز معطل کرنے کی دھمکی

  مظفرآباد(دھرتی نیوز )احتساب بیورو آزادکشمیر کی مالی بے ضابطگیوں کے ایک پرانے مقدمے میں انکوائری کے بعدڈسٹرکٹ ہیلتھ آفیسر (ڈی ایچ او) پونچھ ڈاکٹر محمد حیات کو  راولاکوٹ سے گرفتار کر لیا گیا۔ان کی گرفتاری چیئرمین احتساب بیورو سردار نعیم شیراز خان کی طرف سے منظوری کے بعد کی گئی۔ڈاکٹر حیات کے خلاف سدھنوتی میں بطور ڈی ایچ او تعیناتی کے دوران ادویات کی خریداری وغیرہ میں کروڑوں روپے کی کرپشن کرنے کے الزامات تھے۔ان پر غیرقانونی تقرریوں اور ملازمین کے الاؤنس، ایکسرے فیس وغیرہ میں بھی بے قاعدگیوں  کا الزام ہے۔ احتساب بیورو ٹیم نے تحقیقات کے بعد ڈاکٹر محمد حیات کو گرفتار کر کے تھوری سیف ہاوس مظفرآباد منتقل کر دیا۔  احتساب بیورو کے ذرائع کے مطابق اس کیس میں مزید گرفتاریاں متوقع ہیں جبکہ گرفتار ملزم کومزید تفتیش کے بعد احتساب بیورو عدالت میں پیش کیا جائے گا۔واضع رہے کہ گذشتہ کچھ سالوں سے احتساب بیور آزاد کشمیر مسقل چیئرمین نہ ہونے اور دیگر وجوہات کی وجہ سے غیر فعال تھا۔بعد ازاں ایک بل بھی اسمبلی سے پاس کروایا گیا کہ کسی بھی ملزم کی گرفتاری سے پہلے اس کے خلاف الزامات کی تحقیقات ہونی ضروری ہیں اور اور اگر الزام درست ثابت ہوتا ہے تو تب ہی گرفتاری عمل میں لائی جائے۔اب جبکہ آزاد کشمیر میں نئے الیکشن  ہونے والے ہیں اور موجودہ حکومت کا اثرو سوخ کم ہو گیا ہے تو زیادہ امکان اس بات کا ہے کہ گذشتہ چند مہینوں میں جن مقدمات کی تحقیقات مکمل ہو چکی ہیں وہ ملزمان جلد گرفتار کر لیے جائیں گے۔واضع رہے کہ احتساب بیورو میں جناح ٹاون میرپور سمیت متعدد ایسے مقدمات زیر سماعت رہے جن میں بڑے بڑے بیوروکریٹ جو اب گریڈ اکیس میں ملوث ہیں شامل رہے لیکن انہیں مقدمات خارج کر کے بری کر دیا گیا۔ادھر محکمہ صحت عامہ کے ملازمین کی تنظیموں اور پاکستان میڈیکل ایسوسی ایشن آزادکشمیر(پی ایم اے) نے اس واقعہ کا سخت نوٹس لیتے ہوئے پورے آزاد کشمیر میں ہلتھ سروسز معطل کرنے کی دھمکی دی ہے۔پی ایم اے کے سابق صدر ڈاکٹر واجد علی نے کہا کہ ڈی ایچ او کی گرفتاری کرنے والے لوگوں نے اپنی شناخت نہیں کروائی اور نہ ہی وارنٹ دکھائے گے۔بدمعاشی کے ذریعے گرفتاری کی گئی،مقامی انتظامیہ کو بے خبر رکھا گیا اور ایڈیشنل ڈسٹرکٹ ہیلتھ آفیسر کو کئی گھنٹوں تک حبس بے جا میں رکھا گیا۔ہیلتھ ایمپلائیز آرگنائزیشن کے سرپرست اعلیٰ سردار خالد محمود کے مطابق جملہ ملازمین کی تنظیمیں اس واقعہ پر سراپا احتجاج ہیں۔تمام تنظیمیں مشترکہ لائحہ عمل طے کرنے کے لیے رابطے میں ہیں اور زیادہ امکان اس بات کا ہے کہ پورے آزاد کشمیر میں ہیلتھ سروسز کی معطلی دیگر اقدامات کے لیے لائحہ عمل طے کیا جائے گا۔  

آج کااخبار

سب سے زیادہ پڑھی جانے والی خبریں

کالم